Welcome to Ajareresalat.net

Register now to gain access to all of our features. Once registered and logged in, you will be able to contribute to this site by submitting your own content or replying to existing content. You'll be able to customize your profile, receive reputation points as a reward for submitting content, while also communicating with other members via your own private inbox, plus much more!

This message will be removed once you have signed in.

All Activity

This stream auto-updates   

  1. Last week
  2. Earlier
  3. Ali Al Azeem

    Ali Al Azeem View File Ali Al Azeem New Urdu Book Book By Syed Sadaat Hussain Naqvi Submitter Ali Haider Submitted 11/21/2017 Category Urdu  
  4. Ali Al Azeem

    Version Urdu

    2 downloads

    Ali Al Azeem New Urdu Book Book By Syed Sadaat Hussain Naqvi
  5. writing lyrics of songs

    haram kaam say kamiya giya pasa haram hai aur har woh music haram hai jo app ko buraiye ki taraf lay jata hai
  6. Mudrik Al Talib Fe Nasab e Ale Abi Talib as - مدرک الطالب فی نسب آل ابی طالب ع View File Submitter Mubbshir Kazmi Submitted 10/17/2017 Category Urdu  
  7. writing lyrics of songs

    Salam, I wanted to ask if it is right for me to write lyrics of the songs in their own music videos and post it on youtube to earn some money?
  8. Promo Rehan firdosi vol. 6

    https://youtu.be/aq9UwQviwbQ zafar_abbas_zafar.mp4
  9. Hussain zinda rahega

    Shukriya bhai
  10. Hussain zinda rahega

    mashallah rehan bhai
  11. Mirza Rehan Ali firdousi

    https://youtu.be/aq9UwQviwbQ zafar_abbas_zafar.mp4
  12. Kitab Manqabat qataat salam

    sharar Alqama.pdfsharar Alqama.pdfsharar Alqama.pdfsharar Alqama.pdf sharar_Alqama.pdf
  13. فیسبک گروپ امام بارگاہ قصر زینبیہ میں ایک گفتگو کی نشست موضوع "ماتم حسین" سید حسنین حیدر کاظمی... تحفہ یا علی ع مدد الہم صلے علی محمد و آل محمد و عجل فرجہ پڑھتے رھے نماز جو ماتم کو چھوڑ کر ایسے نمازیوں سے قضاؑ ھوگیا حسین ع پاک صاف بدن سے تو سب ھی نماز پڑھتے ھیں زخمی بدن کیساتھ نماز یا مولا حسین ع نے ادا کی یا مولا سجاد ع نے اور یہ سنت صرف زنجیرزنوں کے نصیب میں ھے. میں سوچا کرتا تھا زنجیرزن بننا فائدہ ؟ جبکہ شریعت کہتی ھے کہ خون نجس ھوتا ھے نماز نہیں ھوتی آپ اپنا ھی خون بہا کر کہا حاصل کررھے ھیں ؟ کیا ثابت کرنا چاھتے ھیں ؟ پھر ایک دن بحارالانوار میں جلد نمبر 4 کا مطالعہ کرتے ھوئے میں نے پڑھا یہ تو اللّہ چاھتا ھے کہ غم حسین میں خون بہایا جائے میں دیکھا آدم ع حوا کو ڈھونڈتے ڈھونڈتے جب کربلا پہنچے تو پتھر سے ٹھوکر کھائی خون نکلا گھبرا کر آسمان کی طرف دیکھا مالک ؟ کوئی غلطی ؟ کوئی کوتاھی ؟ جبرائیل نازل ھوا نہیں آدم کوئی غلطی نہیں یہ مقام کربلا ھے جس جگہ تو کھڑا ھے یہ مقتل حسین ع ھے آدم نے ہوچھا حسین ع کون؟ کون قتل کرے گا ؟ جواب ملا جسکی نبوت کے اقرار نے تجھے نبی بنایا جسکی ولائیت نے تجھے صفی اللّہ بنایا اسکا بیٹا ھے پوچھا میرا خون کیوں نکلا یہاں ؟ جواب ملا اللّہ چاھتا ھے کہ تیرا خون پہلے اس مٹی کا حصّہ بنے جہاں حسین ع کا خون گرے گا پوچھا قاتل کون ھے حسین ع کا ؟ جواب ملا یزید لعین تو اب تو اس پر لعنت کر آدم نے گریہ کیا لعنت کی تو پتا چلا گریہ خون بہانا لعنت کرنا سنت آدم ھے اور حکم خدا بھی ھے منشاء الہٰیہ بھی ھے پھر میں نے دیکھا نوح اپنی کشتی پر سوار کربلا پہنچا کشتی ڈول گئی موج ایسی اٹھی کہ لگتا تھا کشتی ڈوبے گی نوح کو بتایا گیا یہ کربلا ھے پھر وھی سب لعنت کروائی گئی پھر ابراھیم ع آئے گھوڑے کو ٹھوکر لگی زمین پر گرے ماتھے کا خون نکلا پھر وھی سوال جو آدم نے کیئے پھر وھی جواب جبرائیل نے دئیے پھر وھی گریہ پھر وھی خون پھر وہی لعنت پھر موسیٰ آئے پیر کی جوتی ٹوٹی پیر میں کانٹے چبھے خون جاری ھوا پھر وھی سوال پھر وھی جواب پھر وھی گریہ پھر وھی خون پھر وھی لعنت تو سمجھ میں آیا اللّہ تو اپنے انبیاء سے تین کاموں کا تقاضا کر رھا ھے 1- حسین ع پر گریا کرو 2- حسین ع کے لیئے خون بہاؤ 3- یزید لعین پر لعنت کرو تو جو انبیاء پر ایمان رکھتا ھے انکی سنت پر عمل کرتا ھے وھی تو مومن ھے پھر میں نے سوچا کسی سے محبت کی انتہا کیا ھے ؟ جواب ملا جان دینا سوچا کہ خودکشی تو حرام ھے اب کیا کروں ؟ دل نے آواز دی میرا ھاتھ پکڑ چل تجھے کرن لے چلوں ایک محب ھے نام اویس قرنی ھے تیری طرح اس نے بھی رسول ص کو ساری زندگی آنکھوں سے نہیں دیکھا تھا بس پتا چلا کہ جنگ احد میں رسول ص کے دو دانت شہید ھوگئے اس نے اپنے دانت توڑ لیئے خون بہایا اپنا ادھر قرآن نے آواز دی او پیر بھائی ادھر آ میں بتاتا ھوں میں نے یاعلی ع مدد کہا اس نے سورۃ یوسف کھولی یہ دیکھ " یوسف کی محبت میں عورتوں نے اپنی انگلیاں کاٹ لیں تھیں " خون بہایا کیا اللّہ نے انکی مذمت کی ؟ نہیں نا ؟ پورے قرآن میں کہیں نہیں بلکہ انکو مثال بنا دیا حجت خدا کی محبت میں خون بہانا پسند ھے رب کو میں خوش ھوگیا سمجھ آگیا مجھے اپنی محبت کا ثبوت کیسے دینا ھے ؟ اتنے میں کربلا سے حبیب ابن مظاھر کی آواز آئی او پیر بھائی جنکی محبت میں قتل ھونے کے بعد عام مردوں کی طرح ھم نجس نہیں ھوتے غسل میت کی ضرورت نہیں ھوتی اسی طرح انہی کی محبت میں نکلا ھوا خون نجس نہیں ھوتا نماز ھوجاتی ھے مولوی کو چھوڑ علی علی ع کر لبّیک یا حسین ع سلام یا حسین ع حئ علیٰ عزاء الحسین ع
  14. islam

  15. How did Lady Fatima Al-Zahra (peace be upon her), the daughter of the Holy Prophet, die at such a young age? Why did she order her husband, Imam Ali, to bury her at night and in secret? Why, to this day, do we not know the exact location of her grave? Why does Sahih Al-Bukhari and Sahih Muslim report that she died angry at Abu Bakr? Why did she forbid Abu Bakr and Umar from praying over her body?We all know the famous Hadith of Allah's Messenger (peace be upon him and his family): "Whoever dies without recognising the Imam of their time, dies the death of Jahiliyya (ignorance)." So who was the Imam of Lady Fatima (peace be upon her)? We know that she definitely did recognise an Imam, or else she - God forbid - died the death of ignorance. But we know that it was not Abu Bakr, as she died angry with Abu Bakr. So who was her Imam? If it was Imam Ali (peace be upon him), then what does that say about Abu Bakr's self-proclaimed, political leadership?These are questions that our brothers and sisters who call themselves "Ahlus-Sunnah" must seek answers for.
  16. Doctors Without Borders (MSF) says more than 570 suspected cases of cholera have been treated in Yemen during the past three weeks, some seven months after the outbreak of the infectious disease was declared in the conflict-plagued impoverished Arab country."There are fears that the disease could turn into an epidemic. Two years into the war, the healthcare system has collapsed, hospitals are destroyed, and government employees' salaries have not been paid," said GhassanAbouChaar, the spokesperson for the international medical charity, on Sunday.He added that the MSF had witnessed a marked increase over the past week in suspected cholera cases in five provinces across the country.Abdelhakim al-Kahlani, Yemen's Ministry of Healthspokesperson, said the bacterial infection had resurfaced the previous week in the impoverished country, with reported cases in 10 provinces.
  17. THE SAHABA KNEW OF IMAM ALI'S SUCCESSION TO THE PROPHET!Those who oppose the Shia repeatedly argue that the belief in Imam Ali (peace be upon him) succeeding the Messenger of Allah (peace be upon him and his family) is a belief which was created later in history by a Jewish man, known as Abdullah bin Saba.Little do they read of their own most prominent books of Hadith - which they regard to be their most authentic collections of reports. For if they had delved into their very own Hadith books, they would know that this idea of Imam Ali's succession was something which was known amongst the people.
  18. The deadly drone strike was conducted in al-Saeed area of Shabwah Province on Sunday afternoon. The casualties came after the aerial attack hit a vehicle carrying four people, suspected to be al-Qaeda members. The vehicle was completely destroyed in the strike, which also hit three civilians who happened to be passing nearby. The US has intensified its military engagement in Yemen in recent weeks. On March 2, Washington launched a series of strikes against alleged al-Qaeda targets in Yemen. The military attacks focused on the southern provinces of Abyan and Shabwah as well as Bayda, farther to the north. The military operations were the first since a botched ground raid in January that killed women and children as well as an American commando. The drone strikes in Yemen continue alongside the Saudi military aggression against the impoverished conflict-ridden country. Saudi Arabia has been incessantly pounding Yemen since March 2015 in an unsuccessful attempt to reinstate a former government. The aerial attacks, initiated by former US President George W. Bush in 2004, were escalated during former US president Barack Obama’s terms in office. The attacks had been carried out in Pakistan, Yemen, Somalia, Libya and elsewhere. US President Donald Trump has recently given the CIA new authority to launch drone strikes across various parts of the world in Washington’s so-called war on terror. The US claims the airstrikes target members of terrorist groups such as al-Qaeda and other militants, but according to local officials and witnesses, civilians have also been the victims of the attacks in many cases.
  19. بسم اللہ العلی الاعلیٰ و ھوالعلی الظیم و ربّ العالمین ۔ مختصر سوانح حیات ظاھرہ پاک مخدومہ سیّدہ زینب سلام اللہ علیہا بنت امام علی علیہ السّلام ----------------------------------------------------------------------------------- اسم گرامئی : ------------ زینب الکبریٰ سلام اللہ علیہا روایات میں ھے کہ آپکا یا نام گرامئی رسول اللہ ص نے مبطابق حکم الہیٰہ رکھا مفہوم اسم گرامئی : ------------------ عربی زبان میں " زین اب " جنت کے خوشبودار درخت کو کہتے ھیں اسکے علاوہ " خوش منظر اور باپ کی زینت بھی ھے " آپکے والد محترم : ----------------- امیر کائنات امام المتقین " امام علی ابن ابیطالب علیہ السّلام " آپکی والدہ محترمہ : ----------------- مخدومہ کائنات " بنت رسول اللہ سیّدہ فاطمہ سلام اللہ علیہا " القاب : ------ عقیلۂ بنی ہاشم، عالمۃ غَیرُ مُعَلَّمَہ، عارفہ، موثّقہ، فاضلہ، كاملہ، عابدہ آل علی، معصومۂ صغری، امینۃ اللہ، نائبۃ الزہرا، نائبۃ الحسین، عقیلۃ النساء، شریكۃ الشہداء، بلیغہ، فصیحہ اور شریكۃ الحسین۔ سلام اللہ علیہا کنُئیت : ------- مشہوُر " اُم المُصائب " ص اور " شریکۃ الحسین " ص ھے دُنیا میں ظہوُر : -------------- 5 جمادی الثانی 5 ھجری مقام ظہوُر : ----------- مدینۃ المنوّرہ شوھر : ------- حضرت عبداللہ ابن جعفر طیّار ابن ابوطالب علیہ السّلام اولاد : ------ چار بیٹے ۔۔۔ علی، عون، عباس، محمد؛ ایک بیٹی ۔۔۔۔ ام کلثوم بچپن : ------ مدینہ منوّرہ میں گزرا ، بچپن عام لڑکیوں جیسا نہیں تھا بلکہ آپ شروع سے ھی عالمہ غیر معلمہ اور پردہ دار تھیں یہاں تک کہ آپ کے بارے میں ملتا ھے کہ جب امام علی علیہ السّلام گھر تشریف لاتے تو آپ سامنے نہیں جاتیں تھیں بلکہ اپنی والدہ کی اوٹ سے بات کرتی تھیں علم کا یہ حال تھا کہ ایک واقع ملتا ھے کہ ۔۔۔ حضرت زینب(ع) نے طفولت کے ایام میں اپنے والد علی(ع) سے پوچھا: ابا جان! کیا آپ ہم سے محبت کرتے ہیں؟ امیرالمؤمنین(ع) نے فرمایا: میں تم سے محبت کیوں نہ کروں، تم تو میرے دل کا ثمرہ ہو؛ حضرت زینب(س) نے عرض کیا: لایجتمع حبّان فی قلب مؤمن حبّ الله وحب الاولاد وان کان ولابد فالحب لله تعالی و الشفقة للاولاد؛ ترجمہ: " دو محبتیں مؤمن کے دل میں جمع نہيں ہوتیں: خدا کی محبت اور اولاد کی محبت؛ پس اگر کوئی چارہ نہ ہو تو محبت (حُبّ)، خدا کے لئے مخصوص ہے اور شفقت اور مہربانی اولاد کے لئے " امیرالمؤمنین(ع) نے بیٹی کا یہ جواب سنا تو ان سے اپنی محبت میں اضافہ کردیا۔ ۔ بھائی امام حسین علیہ السلام سے خاص محبت : ------------------------------------------- حضرت زینب(س) طفولت کے ایام سے ہی امام حسین علیہ السلام سے شدید محبت کرتی تھیں۔ جب کبھی امام حسین(ع) آپ کی آنکھوں سے اوجھل ہوجاتے تو آپ بےچین ہوجاتی تھیں اور جب آپ کی نظریں بھائی کے جمال سے منور ہوتیں تو شاداب و مسرور ہوجاتی تھیں۔ اگر گہوارے میں رو پڑتیں تو بھائی حسین(ع) کا دیدار کرکے یا آپ کی صدا سن کر پرسکون ہوجاتی تھیں۔ بالفاظ دیگر حسین(ع) کا دیدار یا آپ کی صدا زینب(س) کے لئے سرمایۂ سکون تھا۔ اسی عجیب محبت کے پیش نظر، ایک دن حضرت زہرا(س) نے یہ ماجرا رسول اکرم(ص) کو سنایا تو آپ(ص) نے فرمایا: "اے نور چشم! یہ بچی میرے حسین(ع) کے ساتھ کربلا جائے گی اور بھائی کے مصائب اور رنج و تکلیف میں شریک ہوگی" روز عاشور آپ اپنے دو کم عمر لڑکوں عون و محمد کو لے کر امام(ع) کے پاس آئیں اور عرض کیا: "میرے جدّ ابراہیم خلیل (ع) نے درگاہ پروردگار سے قربانی قبول کی آپ بھی میری یہ قربانی قبول کریں! " اگر ایسا نہ ہوتا کہ جہاد عورتوں کے لئے جائز نہيں ہے، تو میں اپنی جان آپ ہر قربان کردیتی " ۔ عبادت : ------- حضرت زینب كبری(س) راتوں کو عبادت کرتی تھیں اور اپنی زندگی میں آپ نے کبھی بھی نماز تہجد کو ترک نہيں کیا۔ اس قدر عبادت پروردگار کا اہتمام کرتی تھیں کہ عابدہ آل علی کہلائیں ۔ آپ کی شب بیداری اور نماز شب دس اور گیارہ محرم کی راتوں کو بھی ترک نہ ہوئی۔ فاطمہ بنت الحسین(ع) کہتی ہیں : " شب عاشور پھوپھی زینب(ع) مسلسل محراب عبادت میں کھڑی رہیں اور نماز و راز و نیاز میں مصروف تھیں اور آپ کے آنسو مسلسل جاری تھے " خدا کے ساتھ حضرت زینب(س) کا ارتباط و اتصال کچھ ایسا تھا کہ حسین(ع) نے روز عاشورا آپ سے وداع کرتے ہوئے فرمایا: "یا اختي لا تنسيني في نافلة الليل" ترجمہ: میری بہن ۔۔۔ " نماز شب میں مجھے مت بھولنا " ۔ حجاب : ------- جب بھی حضرت زینب(س) مسجد النبی(ص) میں اپنے جد امجد رسول اللہ(ص) کے مرقد انور پر حاضری دینا چاہتیں تو امیرالمؤمنین(ع) حکم دیتے تھے کہ رات کی تاریکی میں جائیں اور حسن و حسین علیہما السلام کو ہدایت کرتے تھے کہ بہن کی معیت میں جائیں چنانچہ ایک بھائی آگے ہوتا تھا، ایک بھائی پیچھے اور حضرت زینب(س) بیچ میں ہوتی تھیں. ان دو بزرگواروں کو والد بزرگوار کا حکم تھا کہ مرقد النبی(ص) پر لگا ہوا چراغ بھی بجھادیں تاکہ نامحرم کی نگاہ قامت ثانی زہراء(س) پر نہ پڑے۔ یحیی مازنی کہتے ہیں: میں مدینہ میں طویل عرصے تک امیرالمؤمنین(ع) کا ہمسایہ تھا؛ خدا کی قسم اس عرصے میں، مجھے کبھی بھی حضرت زینب(س) نظر نہ آئیں اور نہی ہی ان کی صدا سنائی دی ۔ صبر و استقامت : ---------------- حضرت زینب(س) صبر و استقامت اپنی مثال آپ تھیں۔ آپ کی زندگی میں اتنے مصائب سے دوچار ہوئیں کہ تاریخ میں آپ کو ام المصائب کے نام سے یاد کیا گیا ہے۔ کربلاء میں جب اپنے حسین(ع) کے خون میں غلطاں لاش پر پہنچی تو آسمان کی طرف رخ کرکے عرض کیا بار خدایا! تیری راہ میں ہماری اس چھوٹی قربانی کو قبول فرما۔ ایک محقق کا کہنا ہے کہ: زینب(س) کے القاب میں سے ایک ہے اور اس مخدَّرہ� نے سختیوں اور دشواریوں کے سامنے اس طرح سے استقامت کرکے دکھائی کہ اگر ان کا تھوڑا سا حصہ محکم پہاڑوں پر وارد ہوتا تو وہ تہس نہس ہوجاتے، لیکن اس مظلومہ بےکسی، تنہائی اور غریب الوطنی میں "كالجبل الراسخ..." (ترجمہ مضبوط پہاڑ کی مانند) تمام مصائب کے سامنے استقامت کی آپ نے بارہا امام سجّاد(ع) کو موت کے منہ سے نکالا؛ منجملہ ان موارد میں سے ایک ابن زیاد کے دربار کا واقعہ ہے، جب امام سجّاد(ع) نے عبید اللہ بن زياد سے بحث کی تو اس نے آپ(ع) کے قتل کا حکم دیا. اس موقع پر حضرت زینب(س) نے بھتیجے کی گردن میں ہاتھ ڈال کر فرمایا: "جب تک میں زندہ انہیں قتل نہيں کرنے دونگی ۔ کربلا اورمخدومہ سلام اللہ علیہا : ------------------------------ کربلا اور مخدومہ سلام اللہ علیہا ایک دوسرے کے بغیر نامکمل ھیں لشکر یزید کے لعینوں سے لیکر خود یزید لعین اور اسکے حواریوں تک نے سمجھا تھا کہ نعوذباللہ " امام حسین ع ختم ھوگئے ؟؟ " وہ نہیں جانتے تھے کہ " شریکۃ الحسین مخدومہ سلام اللہ علیہا وہ شریک ھیں اپنے بھائی کے مشن کی جو نا صرف اپنے مشن کو بلکہ بھائی کو بھی قیامت تک کیلیئے وہ زندگی عطاء کردیں گی کہ دشمن اور اسکی نسلیں ھاتھ ملتی رہ جائیں گی کربلا سے شام تک کے اس سفر میں مخدومہ صلوٰۃ اللہ علیہہ نے وہ کام کیا جو کسی اور کے نصیب میں نا آپ سے پہلے آیا نا آپ کے بعد عصر عاشور بھائی امام حسین علیہ السّلام کے بے کفن لاشہ پر تشریف لائیں اور آسمان کی طرف دیکھ کر ھاتھ بلند کرتے ھوئے فرمایا " اے میرے اللہ! یہ قربانی ہم سے قبول فرما " گیارہ محرم کو جب قافلہ اسیران کربلا روانہ ھوا اور امام حسین ع کے لاشہ کے پاس پہنچا تو آپ نے کود کو اونٹ کی پشت سے گرایا پھر مدینہ کی طرف رخ کیا اور کہا : "وا محمداه بناتك سبايا و ذريتك مقتلة تسفي عليهم ريح الصبا، و هذا الحسين محزوز الرأس من القفا مسلوب العمامة و الردا، بابي من اضحي عسكره في يوم الاثنين نهبا، بابي من فسطاطه مقطع العري، بابي من لا غائب فيرتجي و لا جريح فيداوي بابي من نفسي له الفدا، بابي المهموم حتي قضي، بابي العطشان حتي مضي، بابي من شيبته تقطر بالدماء، بابي من جده محمد المصطفي، بابي من جده رسول اله السماء، بابي من هو سبط نبي الهدي، بابي محمد المصطفي، بابي خديجة الكبري بابي علي المرتضي، بابي فاطمة الزهراء سيدة النساء، بابي من ردت له الشمس حتي صلي" ترجمہ : " اے محمد یہ آپ کی بیٹیاں ہیں جو اسیر ہوکر جارہی ہیں. یہ آپ کے فرزند ہیں جو خون میں ڈوبے زمین پر گرے ہوئے ہیں، اور صبح کی ہوائیں ان کے جسموں پر خاک اڑا رہی ہیں! یہ حسین ہے جس کا سر پشت سے قلم کیا گیا اور ان کی دستار اور ردا کو لوٹ لیا گیا؛ میرا باپ فدا ہو اس پر جس کی سپاہ کو سوموار کے دن غارت کی گئیں، میرا باپ فدا ہو اس پر جس کے خیموں کی رسیاں کاٹ دی گئیں! میرا باپ فدا ہو اس پر جو نہ سفر پر گیا ہے جہاں سے پلٹ کر آنے کی امید ہو اور نہ ہی زخمی ہے جس کا علاج کیا جاسکے! میرا باپ فدا ہو اس پر جس پر میری جان فدا ہے؛ میرا باپ فدا ہو اس پر جس کو غم و اندوہ سے بھرے دل اور پیاس کی حالت میں قتل کیا گیا؛ میرا باپ فدا ہو اس پر جس کی داڑھی سے خون ٹپک رہا تھا! میرا باپ فدا ہو جس کا نانا رسول خدا(ص) ہے اور وہ پیامبر ہدایت(ص)، اور خدیجۃالکبری(س) اور علی مرتضی(ع)، فاطمۃالزہرا(س)، سیدة نساء العالمین کا فرزند ہے، میرا باپ فدا ہو اس پر وہی جس کے لئے سورج لوٹ کے آیا حتی کہ اس نے نماز ادا کی..." ۔ حضرت زینب (س) جب كوفہ میں پہنچیں : --------------------------------------- لشکر یزید جب قافلہ کو لیکر کوفہ پہنچا اور بازاروں میں گھما رھا تھا تو مخدومہ سلام اللہ علیہا نے وھاں ایک خطبہ ارشاد فرمایا جسکو سن کر وھاں کے لوگوں کے سر شرم سے جھک گئے بُشربن خُزیم اسدی حضرت زینب (ع) کے اُس خطبے کے بارے میں کہتا ہے: " اس دن میں زینب بنت علی(ع) کو دیکھ رہا تھا؛ خدا کی قسم میں نے کسی کو خطابت میں ان کی طرح فصیح و بلیغ نہیں دیکھا؛ گویا امیرالمؤمنین علی بن ابیطالب(ع) کی زبان سے بول رہی تھیں۔ آپ نے لوگوں سے مخاطب ہو کر ایک غضبناک لہجے میں فرمایا: "خاموش ہوجاؤ"! تو نہ صرف لوگوں کا وہ ہجوم خاموش ہوا بلکہ اونٹوں کی گردن میں باندھی گھنٹیوں کی آواز آنا بھی بند ہوگئی " اس خطبہ کا ھی اثر تھا کہ کوفہ میں یزید لعین کے خلاف بغاوت کے آثار نے جنم لیا اور جسکے بعد عبداللہ بن عفیف ازدی اور زید بن ارقم کے اعتراضات نے کوفہ کے عوام میں جرأت پیدا کر دیا اور بلآخر اسکا نتیجہ " قیام امیر مختار ؒ " کی شکل میں نکلا کیونکہ کوفی اپنے چہرے سے وہ کلنک کا ٹیکہ دھونا چاھتے تھے جو انہوں نے نصرت امام علیہم السّلام نا کرکے اپنے چہروں پر لگوایا تھا ۔ رھی سہی کسر مخدومہ سلام اللہ علیہا کہ اس مناظرانہ خطبہ نے پوری کر دی جو آپ نے عمرسعد لین کے دربار میں دیا جو تاریخی خطبہ ھے ۔ آل رسول و اسیران محبان رسول (ص) شام میں : --------------------------------------------- کوفہ میں بغاوت کے آثار دیکھ کر قافلہ کو شام بھیجنے کا فیصلہ کیا گیا یزید لعین نے ابن زیاد کو اسراء اہل بیت کو شہیدوں کے سروں کے ہمراہ شام بھیجنے کا حکم دیا حکم دیا۔ چنانچہ ااہل بیت اطہار(ع) کا یہ کاروان شام روانہ ہوا اسراء اہل بیت (ع) کے شام میں داخل ہوتے وقت یزید کی حکومت کی جڑیں مضبوط تھیں؛ شام کا دارلخلافہ دمشق جہاں لوگ علی (ع) اور خاندان علی کا بغض اپنے سینوں میں بسائے ہوئے تھے؛ چنانچہ یہ کوئی حیرت کی بات نہ تھی کہ لوگوں نے اہل بیت رسول (ص) کی آمد کے وقت نئے کپڑے پہنے شہر کی تزئین باجے بجاتے ہوئے لوگوں پر خوشی اور شادمانی کی کیفیت طاری تھی گویا پورے شام میں عید کا سماں تھا ۔ دربار یزید لعین میں : -------------------- یزید نے ایک با شکوہ مجلس ترتیب دیا جس میں اشراف اور سیاسی و عسکری حکام شریک تھے۔ اس مجلس میں یزید نے اسیروں کی موجودگی میں [وحی، قرآن، رسالت و نبوت کے انکار پر مبنی] کفریہ اشعار کہے اور اپنی فتح کے گن گائے اور قرآنی آیات کی اپنے حق میں تاویل کی۔ یزید نے اپنے ہاتھ میں موجود چھڑی کے ساتھ امام حسین(ع) کے مبارک لبوں کی بے حرمتی کرنا شروع کیا ؎ اور رسول اکرم(ص) اور آپ کی آل کے ساتھ اپنی دشمنی کو علنی کرتے ہوئے کچھ اشعار پڑھنا شروع کیا جن کا مفہوم کچھ یوں ہے: " اے کاش میرے آباء و اجداد جو بدر میں مارے گئے زندہ ہوتے اور دیکھتے کہ قبیلہ خرزج کس طرح ہماری تلواروں کی ستم کا نشانہ بنا ہے، تو وہ اس منظر کو دیکھ کر خوشی سے چیخ اٹھتے: اے یزید! تہمارے ہاتھ کبھی شل نہ ہوں ۔ ہم نے بنی‌ ہاشم کے بزرگان کو قتل کیا اور اسے جنگ بدر کے کھاتے میں ڈال دیا اور اس فتح کو جنگ بدر کی شکست کے مقابلے میں قرار دیا۔ بنی ہاشم نے سیاسی کھیل کھیلا تھا ورنہ نہ آسمان سے کوئی چیز نازل ہوئی ہے اور نہ کوئی وحی اتری ہے " ۔ اتنے میں مجلس کے ایک کونے سے حضرت زینب (س) اٹھیں اور بلند آواز میں خطبہ ارشاد فرمایا۔ ۔ خطبہ جناب سٰیدہ سلام اللہ علیہا : ----------------------------- حضرت زینب (س) نے یزید لعین سے مخاطب ہوکر فرمایا " تو جو بھی مکر و حیلہ کرسکتا ہے کرلے، اور [خاندان رسول(ص)] کے خلاف جو بھی سازشین کرسکتا ہے کرلے لیکن یاد رکھنا تو ہمارے ساتھ اپنا روا رکھے ہوئے برتاؤ کا بدنما داغ کبھی بھی تیرے نام سے مٹ نہ سکے گا، اور تعریفیں تمام تر اس اللہ کے لئے ہیں جس نے جوانان جنت کے سرداروں کو انجام بخیر کردیا ہے اور جنت کو ان پر واجب کیا ہے؛ خداوند متعال سے التجا کرتی ہوں کہ ان کی قدر و منزلت کے ستونوں کور رفیع تر کردے اور اپنا فضل کثیر انہيں عطا فرمائے؛ کیونکہ وہی صاحب قدرت مددگار ہے آپ نے مزید فرمایا : بہت جلد جان لے گا وہ ـ جس نے تجھے اس مسند پر بٹھایا ہے اور مؤمنوں کی گردنوں پر مسلط کیا ہے ـ کہ کون گھاٹے میں ہے اور خوار و بےیار و مددگار کون ہے. اس دن قاضی اللہ، مدعی مصطفی اور گواہ تیرے دست و پا ہونگے. اور ہاں اے دشمن خدا! اور دشمن خدا کا بیٹا! میں اسی وقت تجھے چھوٹا اور خوار و ذلیل سمجھتی ہوں اور تیری ملامتوں کے لئے کسی قدر و قیمت کی قائل نہيں ہوں. لیکن کیا کروں کہ آنکھیں گریاں اور سینے جلے ہوئے ہیں اور جو درد و رنج قتل حسین (ع) کی وجہ سے ہمارے دلوں میں بسا ہوا ہے، لاعلاج ہے. شیطان کی جماعت ہمیں سفیہوں اور فاترالعقل افراد کی جماعت کے پاس روانہ کرتی ہے تا کہ وہ [یزید و آل یزید ] مال اللہ (بیت المال) میں سے اس کو خدا کے محارم کی بے توہین کا انعام و پاداش دے. ان جرائم پیشہ ہاتھوں سے ہمارا خود ٹپک رہا ہے اور یہ منہ ہمارے گوشت ے خون سے الودہ خون آلود ہیں اور یہ ہمارا گوشت ہے جو ہمارے دشمنوں کے منہ سے نکل رہا ہے؛ اور دشت کے بھیڑیئے " ۔ سیدہ زينب(س) نے حمد و ثنائے الہی و رسول و آل رسول پر درود وسلام کے بعد فرمایا: اما بعد ! بالاخر ان لوگوں کا انجام برا ہے جنہوں نے اپنا دامن برائیوں سے داغدار کیا، اپنے رب کی آیتوں کو جھٹلایا اور ان کا مذاق اڑایا. اے یزید کیا تو سمجھتا ہے ہم پر زمین کے گوشے اور آسمان کے کنارے لیپٹ سمیٹ کرکے ہمارے لئے تنگ کردیئے ہیں؛ اور آل رسول(ص) کو زنجیر و رسن میں جکڑ کر دربدر پھرانے سے تو درگاہ رب میں سرفراز ہوا ہے اور ہم رسوا ہوچکے ہیں؟ کیا تو سمجھتا ہے کہ ہم پر ظلم کرکے تو نے خدا کے ہاں شان ومنزلت پائی ہے؟ تو آج اپنی ظاہری فتح کے نشے میں بدمستیاں کررہا ہے، اپنے فتح کی خوشی میں جش منا رہا ہے اور خودنمایی کررہا ہے؛ اور امامت و رہبری کے مسئلے میں ہمارا حقّ مسلّم غصب کرکے خوشیاں منارہا ہے؛ تیری غلط سوچ کہیں تجھے مغرور نہ کرے، ہوش کے ناخن لے کیا تو اللہ کا یہ ارشاد بھول گیا ہے کہ: "بارگاہ میں تجھے شان و مقام حاصل ہو گیا ہے؟. آج تو اپنی ظاہری فتح کی خوشی میں سرمست ہے ، مسرت و شادمانی سے سرشار ہو کر اپنے غالب ہونے پر اترا رہا ہے . اور زمامداری[خلافت] کے ہمارے مسلمہ حقوق کو غصب کر کے خوشی و سرور کا جشن منانے میں مشغول ہے . اپنی غلط سوچ پر مغرور نہ ہو اور هوش کی سانس لے . کیا تو نے خدا کا یہ فرمان بھلا دیا ہے کہ "وَلاَ يَحْسَبَنَّ الَّذِينَ كَفَرُواْ أَنَّمَا نُمْلِي لَهُمْ خَيْرٌ لِّأَنفُسِهِمْ إِنَّمَا نُمْلِي لَهُمْ لِيَزْدَادُواْ إِثْماً وَلَهْمُ عَذَابٌ مُّهِينٌ". ترجمہ: اور یہ کافر ایسا نہ سمجھیں کہ ہم جو ان کی رسی دراز رکھتے ہیں یہ ان کے لیے کوئی اچھی بات ہے ہم تو صرف اس لیے انکی رسی دراز رکھتے [اور انہیں ڈھیل دیتے] ہیں اے طلقاء (ھمارے آزاد کردہ غلاموں) کے بیٹے کیا یہ انصاف ہے کہ تو نے اپنی مستورات اور لونڈیوں کو پردے میں بٹها رکھا ہے اور رسول زادیوں کو سر برہنہ در بدر پھرا رہا ہے. تو نے مخدرات عصمت کی چادریں لوٹ لیں اور ان کی بے حرمتی کی. تیرے حکم پر اشقیاءنے رسول زادیوں کو بے نقاب کر کے شہر بہ شہر پھرایا . تیرے حکم پر دشمنان خدا، اہل بیت رسول(ص) کی پاکدامن مستورات کو ننگے سر لوگوں کے ہجوم میں لے آئے. اورلوگ رسول زادیوں کے کھلے سر دیکھ کر ان کا مذاق اڑا رہے ہیں اور دور و نزدیک کے رہنے والے لوگ سب ان کی طرف نظریں اٹھا اٹھا کر دیکھ رہے ہیں. ہر شریف و کمینے کی نگاہیں ان پاک بی بیوں کے ننگے سروں پر جمی ہیں. آج رسول زادیوں کے ساتھ ہمدردی کرنے والا کوئی نہیں ہے. آج ان قیدی مستورات کے ساتھ ان کے مرد موجود نہیں ہیں جو اِن کی سرپرستی کریں. آج آلِ محمد کا معین و مددگار کوئی نہیں ہے. اس شخص سے بھلائی کی کیا توقع ہی کیا ہو سکتی ہے جس کی ماں (یزید کی دادی) نے پاکیزہ لوگوں حمزہ بن عبدالمطلب(ع) کا جگر چبایا ہو. اور اس شخص سے انصاف کی کیا امید ہو سکتی ہے جس نے شہیدوں کا خون پی رکها ہو. وہ شخص کس طرح ہم اہل بیت پر مظالم ڈھانے میں کمی کر سکتا ہے جو بغض و عداوت اور کینے سے بھرے ہوئے دل کے ساتھ ہمیں دیکھتا ہے. اے یزید! کیا تجھے شرم نہیں آتی کہ تو اتنے بڑے جرم کا ارتکاب کرنے اور اتنے بڑے گناہ کو انجام دینے کے باوجود فخر و مباہات کرتا ہوا یہ کہہ رہا ہے کہ "آج اگر میرے اجداد موجود ہوتے تو ان کے دل باغ باغ ہو جاتے اور مجھے دعائیں دیتے ہوئے کہتے کہ اے یزید تیرے ہاتھ شل نہ ہوں! اے یزید ! کیا تجھے حیا نہیں آتی کہ تو جوانانِ جنت کے سردار حسین ابن علی(ع) کے دندان مبارک پر چھڑی مار کر ان کی شان میں بے ادبی کر رہا ہے! اے یزید، تو کیوں خوش نہ ہوگا اور تو فخر و مباہات کے قصیدے نہ پڑھےگا جبکہ تو نے اپنے ظلم و استبداد کے ذریعے فرزند رسول خدا اور عبدالمطلب کے خاندان کے ستاروں کا خون بہا کر ہمارے دلوں پر لگے زخموں کو گہرا کردیا ہے اور کی جڑیں کاٹنے کے گھناونے جرم کا مرتکب ہوا ہے! تو نے اولاد رسول کے خون سے اپنے ہاتھ رنگ لئے ہیں. تو نے خاندان عبد المطلب کے ان نوجوانوں کو تہہ تیغ کیا ہے جن کی عظمت و کردار کے درخشندہ ستارے زمین کے گوشے گوشے کو منور کیے ہوئے ہیں. آج تو آلِ رسول کو قتل کر کے اپنے بد نہاد[برے] اسلاف کو پکار کر انہیں اپنی فتح کے گیت سنانے میں منہمک ہے. تو سمجھتا ہے کہ وہ تیری آواز سن رہے ہیں؟ ! (جلدی نه کر) عنقریب تو بهی اپنے ان کافر بزرگوں سے جا ملے گا اور اس وقت اپنی گفتار و کردار پر پشیمان ہو کر یہ آرزو کرے گا کہ کاش میرے ہاتھ شل ہو جاتے اور میری زبان بولنے سے عاجز ہوتی اور میں نے جو کچھ کیا اور کہا اس سے باز رہتا. اس کے بعد آسمان کی طرف رخ کرکے بارگاہِ الٰہی میں عرض کیا! تب انہیں معلوم ہو گا کہ کون زیادہ برا ہے مکان کے اعتبار سے اور زیادہ کمزور ہے لاؤ لشکر کے لحاظ سے؟! اے ہمارے پروردگار، تو ہمارا حق اور ہمارے حق کا بدلہ ان سے لے؛ اے پرودگار! تو ہی ان ستمگروں سے ہمارا انتقام لے . اور اے خدا! تو ہی ان پر اپنا غضب نازل فرما جس نے ہمارے عزیزوں کو خون میں نہلایا اور ہمارے مددگاروں کو تہہ تیغ کیا. اے یزید ! (خدا کی قسم) تو نے جو ظلم کیا ہے یه تو نے اپنے اوپر کیا ہے؛ تو نے کسی کی نہیں بلکہ اپنی ہی کھال چاک کر دی ہے؛ اور تو نے کسی کا نہیں بلکہ اپنا ہی گوشت کاٹ رکھا ہے. تو رسولِ خدا کے سامنے ایک مجرم کی صورت میں لایا جائے گا اور تجھ سے تیرے اس گھناونے جرم کی باز پرس ہو گی کہ تو نے اولادِ رسول کا خونِ ناحق کیوں بہایا اور رسول زادیوں کو کیوں دربدر پھرایا. نیز رسول کے جگر پاروں کے ساتھ ظلم کیوں روا رکھا!؟ اے یزید ! یاد رکھ کہ خدا، آلِ رسول کا تجھ سے انتقام لے کر ان مظلوموں کا حق انہیں دلائے گا . اور انہیں امن و سکون کی نعمت سے مالامال کر دے گا . خدا کا فرمان ہے کہ تم گمان نہ کرو کہ جو لوگ راہِ خدا میں مارے گئے وہ مر چکے ہیں . بلکہ وہ ہمیشہ کی زندگی پا گئے اور بارگاہِ الٰہی سے روزی پا رہے ہیں . "اور انہیں جو اللہ کی راہ میں مارے گئے ہیں، ہرگز مردہ نہ سمجھو بلکہ وہ زندہ ہیں ، اپنے پروردگار کے یہاں رزق پاتے ہیں". اے یزید ! یاد رکھ کہ تو نے جو ظلم آلِ محمد پر ڈھائے ہیں اس پر رسول خدا ، عدالتِ الٰہی میں تیرے خلاف شکایت کریں گے . اور جبرائیلِ امین آلِ رسول کی گواہی دیں گے . پھر خدا اپنے عدل و انصاف کے ذریعه تجھے سخت عذاب میں مبتلا کر دے گا . اور یہی بات تیرے برے انجام کے لئے کافی ہے . عنقریب وہ لوگ بھی اپنے انجام کو پہنچ جائیں گے جنہوں نے تیرے لئے ظلم و استبداد کی بنیادیں مضبوط کیں اور تیری آمرانہ سلطنت کی بساط بچھا کر تجھے اہل اسلام پر مسلط کر دیا . ان لوگوں کو بہت جلد معلوم ہو جائے گا کہ "کیا برا بدل (انجام) ہے یہ ظالموں کے لیے" ستمگروں کا انجام برا ہوتا ہے اور کس کے ساتھی ناتوانی کا شکار ہیں. " ۔ خطبہ کیا تھا ؟؟ ایک آگ تھی جس نے یزید لعین کے غرور سمیت تمام اھل دربار کو جلا کر راکھ کردیا تھا ۔ قید اور رھائی : -------------- یزید لعین نے قافلہ کی قید کے احکامات جاری کیئے بغیر چھت کے قید خانہ میں اسیران کربلا کو قید کیا گیا جہاں دھوپ بارش مٹی وغیرہ سے بچاؤ کا کوئی طریقہ نہیں تھا یہاں تک کہ امام حسین ع کی چھوٹی دختر شہزادی سکینہ سلام اللہ علیہا شہید ھوگئیں قریب ایک سال بعد جب یزید لعین پر عذاب مسلط ھوا اور اس نے رھائی دینے کا ارادہ کیا تو مخدومہ سلام اللہ علیہا نے فرمایا : " میری کچھ شرائط ھیں اگر وہ پوری کرتا ھے تو ٹھیک ورنہ مجھے رھا نہیں ھونا " یزید لعین نے اپنے باپ معاویہ کی طرح شرائط پوچھیں جیسے اس نے امام حسن علیہ السّلام سے پوچھیں تھیں اور شرائط منظور کیں ان مین سے کچھ شرائط یہ تھیں 1 - ھمارے شہداء کے سر واپس دو 2 - ھمارا لوٹا گیا اسباب واپس دو 3 - ایک مکان کا بندوبست کرو جہاں میں کچھ دن رکوں گی اور " مجلس و ماتم " کا انعقاد کروں گی تاکہ اپنے بھائی کی مظلومیت بیان کرسکوں یزید لعین نے شرائط پوری کرتے ھوئے مکان کا بندوبست کیا اور یوں " پہلا عزاخانہ بعد از شھادت امام حسین علیہ السّلام و اولاد الحسین و اصحاب الحسین علیہم السّلام " بنا جس میں مجلس و ماتم کا انعقاد ھوا شام کی عورتین وھاں آتیں ، مخدومہ سے ذکر سنتیں ، گریہ و ماتم کرتیں اور رخصت ھوجاتیں ۔ جو مرد آتے انکو امام زین العابدین علیہم السّلام ذکر بیان فرماتے اب یہاں ایک سوال ھے ان مذھب کے ٹھیکیداروں سے جو عزاداری کو کمتر اور فروعات دین کو برتر سمجھتے ھیں " مخدومہ فاتح شام سلام اللہ علیہا نے رھائی کے بعد نمازیں پڑھائیں ؟؟ " " روزے رکھوائے ؟ " یا پھر عزاداری کی بنیاد رکھی ؟؟ کیا خواھش ھے مخدومہ سلام اللہ علیہا کی ؟؟ ۔ کربلا واپسی : ------------- کچھ دن شام میں مجالس و تبلیغ کے بعد مخدومہ واپس کربلا پہنچیں ۔ بھائی کی قبر اطہر پر تشریف لائیں خوب گریہ کیا ، اردگرد کے قبائل کے لوگ اور عورتیں آتے ، ذکر سنتے ، گریہ و ماتم کرتے پرسہ دیتے اور لوٹ جاتے مخدومہ سلام اللہ علیہا نے انکو تاکید کی کہ جہاں جائیں امام حسین علیہ السّلام کی عزاداری کی بنیاد رکھیں اور انکی مظلومیت اور حق کو بیان کریں ۔ مدینہ واپسی : ------------- جب مدینہ یہ قافلہ واپس پہنچا تو مدینہ کے باھر رک گیا مدینہ مین خبر پہنچی ایک کہرام بپا ھوا ، مخدومہ اُم البنین سلام اللہ علیہا سب سے پہلے پہنچیں اور قافلہ سے مخدرات عصمت کو لیکر اپنے گھر تشریف لائیں اور پہلی مجلس مولا غازی علیہ السلام کے گھر بپا ھوئی پھر امام حسن ع پھر امام حسین ع اور پھر روضہ رسول ص پر اور پھر یہ سلسلہ جاری رھا یہاں تک کہ مدینہ مین یزید کے خلاف نفرت پیدا ھونے لگی ۔ مدینہ چھوڑنے کا حکم : ---------------------- " عروہ بن سعید اشدق " جو اس وقت والی مدینہ تھا اس نے یزید لعین کو خط لکھا اور حالات لکھ کر خدشہ ظاھر کیا کہ اگر مخدومہ سلام اللہ علیہا یہاں رھیں تو مدینہ میں بغاوت ھوجائے گی یزید لعین کا جواب آیا کہ ان سب کو مدینہ سے نکال دو اور منتشر کردو چناچہ اس لعین نے پیغام پہنچایا مخدومہ سلام اللہ علیہا نے جانے سے انکار کیا اور فرمایا " کدا کی قسم ھم ھرگز یہاں سے نہین جائیں گے چاھے ھمارے خون بہا دئیے جائیں " تو جناب زینب سلام اللہ علیہا بنت عقیل بن ابیطالب علیہا السّلام نے کہا کہ مخدومہ یہاں سے جانا بہتر ھے ۔ قریہ قریہ و شہر شہر مجالس عزاء کا نعقاد و شھادت : -------------------------------------------------- جسکے بعد آپ پہلے مصر گئیں اور وھاں شہر بہ شہر پھرتی رھیں بلآخر حضرت عبداللہ ابن جعفر علیہ السّلام کی زمین جو کہ شام میں تھی وھاں جاکر سکونت اختیار کی وھاں وہ اکثر مجالس عزا و ماتم برپا کرتیں اور ایک دن زمین پر اس درخت کی زیارت کو گئین جہاں بعد از شھادت امام حسین علیہ السّلام سر امام حسین ع باندھا گیا تھا اور جس سے اکثر و بیشتر خون جاری ھوجاتا تھا وھاں مصروف گریہ تھیں کہ ایک ملعون جو دہقان تھا نے اپنا تیشہ آپکو مارا جس سے آپ شدید زخمی ھوئین اور پھر شھادت پاگئیں انا للہ و انا علیہ راجعون ، رضا بقضاء و تسلیماً لی امرہ مخدومہ واقعہ کربلا کے بعد جب تک زندہ رھین " مجالس عزاء و ماتم داری " کو اپنا شیوہ رکھا اسی لیئے ھم تمام عزادار ، شیعہ علی ع ، ماتمی ، زنجیرزن اس عبادت کو افضل سمجھتے ھین اور ھر اس شخص سے اظہار برؑات کرتے ھین جو عزاداری کے کلاف کچھ بھی کہے یا کسی بھی انداز سے کوشش کرے کیونکہ ھم " غلام ھین سیّدہ مخدومہ زینب سلام اللہ علیہا " کے ھماری آخری سانسوں تک اسے ادا کرنے سے ھمین کوئی نہین روک سکتا ۔ آپکا یوم شھادت 15 رجب المرجب ھے ۔ تحقیق و تحریر : شیعہ علی ابن ابیطالب علیہ السّلام : سیّد حسنین حیدر کاظمؔی
  20. بسم اللہ العلی الاعلی و ھو العلی العظیم و ربّ العالمین ۔ مختصر تعارف حضرت امام علی النقی علیہ السّلام ---------------------------------------------- اسم مبارک : علیؑ لقب : النقی ، ناصح ، مُرتضیٰ ، عسکری کنُیت : ابا الحسن یوم ظہور : 5 رجب المرجب 214 ھجری والد محترم کا اسم گرامئ : حضرت امام محمّد التقی ع والدہ محترمہ : جناب سمانہ خاتون علیہا السّلام یوم شھادت : 3 رجب المرجب 254 ھجری آپکے دور کے بادشاھان وقت : مامون رشید ، معتصم باللہ ، واثق باللہ ، متوکل باللہ ، مغتصر باللہ ، مستعین باللہ ، زبیر المعروف معتز باللہ لعن اللہ علیہم اجمعین ۔ حالات زندگی : -------------- مامون الرشید کے مرنے کے بعد معتصم باللہ عباسی مسلمانوں کا خلیفہ مقرر ھوا اس نے حضرت امام محمد تقی ع کو مدینہ سے بغداد طلب کیا اور نظربندی کے احکام جاری کیئے امام محمد تقی ع جانتے تھے کہ اب واپسی مدینہ نہیں ھوگی لہٰذا روانگی سے قبل امام علی النقی ع کو اپنا جانشین مقرر فرمایا اور اسرار امامت تعلیم فرما کر رخصت ھوئے ۔ امام علی النقی ع کے بچپن کا ایک واقعہ : --------------------------------------- مسعودی ( مؤرخ ) کا بیان ھے کہ حضرت امام محمّد تقی ع کی شھادت کے وقت امام علی النقی کہ جنکا سن مبارک اسوقت 6-7 برس تھا مدینہ منوّرہ میں عوام الناس کی توّجہ کا مرکز بن گئے یعنی " مرجع الخلائق " یہ دیکھ کر وہ لوگ جو آل محمّد علیہم السّلام سے دشمنی رکھتے تھے یہ سوچنے پر مجبور ھوئے کہ کسی طرح امام علی النقی ع کی مرکزئیت اور لوگوں کی ان کی طرف رجوع کرنے کی عادت کو ختم کیا جائے ؟ اور چونکہ بظاھر کمسنی ھے تو کوئی عالم انکے ساتھ لگا دیا جائے جو انکی " اپنے اصُولوں " یعنی " اصُول فقہہ " کے مطابق تربیت بھی کرے اور انکے پاس لوگوں کے پہنچنے سے بھی روکے ؟ اسی دوران " عمر ابن فرج رحجی حج کے بعد مدینہ پہنچا تو ان دشمنان فضائل آل محمّد نے اس سے درخواست کی کہ کچھ کرے ؟ بلآخر حکومت وقت کے تعاون سے اور دباؤ سے اس وقت کے عراق کے سب سے بڑے عالم ، ادیب " عبید اللہ جنیدی " کو یہ ذمّہ داری سونپی گئی یہ جنیدی آل محمّد ع کی دشمنی میں بہت شہرت رکھتا تھا حکومت سے معقول تنخواہ پر وہ مدینہ پہنچا اور امام علی النقی ع کو " قصر صربا " میں اپنے پاس بلوا لیا اور ایک طرح سے نظر بند کردیا گیا رات کو تو اسکے دروازے بند ھوتے ھی تھے دن کو بھی شیعان علی ع جو کہ اس وقت " روافض " کے نام سے مشہور تھے کو ملنے کی اجازت نہیں دی جاتی تھی ان انتظامات سے عامۃ الناس تک آپ کا فیض پہنچنا بند ھوگیا راوی کہتا ھے کہ میں نے ایک دن " جنیدی " سے پوچھا " وہ جو ھاشمی غلام ھے ( مولا امام نقی ع) اسکا کیا حال ھے ؟ " جنیدی نے انتہائی بری صورت بناتے ھوئے جواب دیا ، " اُنہیں غلام ھاشمی نا کہو ، وہ رئیس ھاشمی ھیں ، خدا کی قسم وہ کمسنی میں بھی مجھ سے کہیں زیادہ عالم ھیں " " سُنو " " میں جب اپنی پوری کوشش کے بعد جب انکے سامنے ادب کا کوئی باب کھولتا ھوں تو وہ اسکے متعلق ایسے ابواب کھول دیتے ھیں کہ میں حیران رہ جاتا ھوں " " لوگ سمجھ رھے ھین کہ میں انکو تعلیم دے رھا ھوں ؟ " " خدا کی قسم حقیقت تو یہ ھے کہ میں اُن سے تعلیم حاصل کر رھا ھوں " " وہ صرف قرآن کے حافظ ھی نہیں بلکہ تاویل و تنزیل کا علم بھی رکھتے ھیں " " مختصر یہ کہ وہ زمین پر بسنے والوں میں سب سے بہتر اور کائنات میں سب سے افضل ھیں " ( بحوالہ تاریخ المسعودی ، دمعۃ الساکبہ ، اثبات الوصیت ) ۔ حضرت امام علی النقی علیہ السّلام قریب 29 سال مدینہ منوّرہ میں مقیم رھے امام علی النقی ع کے دور میں ابتداء میں چونکہ بادشاھان وقت تیزی سے تبدیل ھوتے رھے تو کچھ عرصہ ایسا ملا کہ حکومت وقت کی توّجہ انکی طرف رھنے کے باوجود بادشاھوں نے انکو تنگ کرنے سے احتراز کیا اور یہی وہ دور تھا کہ جب آپ نے علوم آل محمّد علیہم السّلام کی ترویج کی خاص بات یہ کہ اپنے اس دور میں آپ نے اپنے شیعوں کو بچانے کیلیئے بہت کام کیا وقت سے پہلے انکو آنے والے حالات سے باخبر کرنا آپ کا خاصہ رھا ایک واقعہ اسی سلسلہ کا دیکھیئے ------------------------------- محمد بن فرج رحجی کا بیان ھے حضرت امام علی نقی ع نے مجھے خط تحریر فرمایا " تم اپنے امور و معاملات درست کر لو اور اپنے گھر کے نظام کو ٹھیک کر لو اور اپنے اسلحوں کو سنبھال لو " میں نے ان کے حکم کے مطابق سب کچھ کرلیا لیکن سمجھ نا سکا کہ آپ ع نے یہ حکم کیوں دیا ھے ؟ لیکن چند ھی دنوں بعد مصر کی پولیس میرے گھر آئی اور مجھے گرفتار کرکے لے گئی اور قید خانہ میں بند کردیا جہاں میں آٹھ سال بند رھا ایک دن قید خانہ میں امام نقی علیہ السّلام کا خط ملا جس میں لکھا تھا " اے محمّد بن فرج ۔۔۔ تمُ اُس ناجیہ کی طرف نا جانا جو مغرب کی طرف واقعہ ھے " خط پاتے ھی مجھے شدید حیرانی ھوئی میں سوچتا رھا کہ میں تو قید میں ھوں ؟ میرا ادھر جانا تو ممکن ھی نہیں ؟ پھر امام نے یہ کیوں تحریر فرمایا ھے ؟ امام علیہ السّلام کے خط کو آئے ابھی چار دن گزرے تھے کہ میری رھائی کا حکم آگیا اور مین انکے حکم کے مطابق مقام ممنوع کی طرف نہیں گیا قید سے رھائی کے بعد میں نے امام علیہ السّلام کو خط لکھا " حضور میں قید سے چھوٹ کر گھر آگیا ھوں اب آپ دعا فرمائیں کہ میرا مال جو حکومت نے قبضہ میں لے لیا تھا مجھے واپس مل جائے ؟ " امام علیہ السّلام نے جواباً لکھا " عنقریب تمہارا مال تمہیں مل جائے گا " چنانچہ ایسا ھی ھوا ۔ ۔ ابو ھاشم صحابی کا واقعہ : ------------------------ ابو ھاشم جو کہ امام علی النقی کا مصاحب تھا کا بیان ھے کہ میں امام نقی علیہ السّلام کی بارگاہ میں حاضر ھوا اور عرض کی " مولا ع ۔۔ میں بہت تنگ دست ھوں میرے لیئے کچھ کیجیئے " امام علیہ السّلام نے فرمایا : " معمولی بات ھے ۔۔۔ تمہاری تکلیف دور ھو جائے گی " اسکے بعد امام علیہ السّلام نے ریت کی ایک مٹھی اٹھائی اور میرے دامن میں ڈال دی اور فرمایا " اسے غور سے دیکھو اور اسے فروخت کرکے اپنا کام نکالو " ابو ھاشم کہتا ھے کہ "میں نے جب اپنے دامن میں اس ریت کو دیکھا تو وہ خالص سنے میں تبدیل ھوچکی تھی اور مین نے اسے بازار میں جاکر فروخت کیا تو اچھے خاصے پیسے مل گئے " ( مناقب ابن شہر آشوب ) ۔ متوکل باللہ عباسی اور دشمنی آلؑ محمّدؐ : ------------------------------------ مؤرخین کی نظر میں متوکل عباسی کو وھی درجہ حاصل ھے جو بنی امیّہ میں آل ابوسفیان کو حاصل ھے ۔ حکومت حاصل ھوتے ھی اس نے وھی سب کچھ شروع کیا جو معویہ و یزید لعین کرتے رھے یعنی ذاتی کردار تو داغدار تھا ھی ، دشمنی آل محمدؐ مین بھی کوئی کسر نا چھوڑی ابن کثیر لکھتا ھے یہ علی ابن ابیطالب ، انکی اولاد علیہ السّلام اور انکے شیعوں سے شدید بغض رکھتا تھا تاریخ ابوالفداء میں درج ھے کہ متوکل نے شاعر " ابی سکیت " کو اس جرم میں کہ اس نے متوکل کے سوال ۔۔۔ " میرے بیٹے معتز اور موید زیادہ بہتر ھین یا علی ع کے بیٹے حسن و حسین علیہم السّلام ؟ " کے جواب میں یہ کہا کہ " تیرے بیٹے امام حسن و حسین ع تو کیا انکے غلام قنبر کے برابر بھی نہیں " زبان گُدّی سے کھنچوا لی ۔ یہ وھی ملعون ھے جس کی چار ھزار (4000) کنیزیں تھیں اور یہ ان سب سے مونہہ کالا کرچکا تھا دربار میں مسخرے رکھتا اور جو زیادہ مسخرہ پن کرتا اسکو یہ اپنے قریب رکھتا تھا اپنے دربار میں سانپ ، بچھو چھوڑوا کراپنے درباریوں کا تماشہ دیکھتا اور ھنستا تھا مؤرخ جلال الدین السیوطی لکھتا ھے متوکل ناصبی تھا ، علی و اولاد علی علیہم السّلام کیساتھ انکے شیعوں کا شدید دشمن تھا یہ وھی حرامزادہ تھا جس نے کربلا معلیٰ میں وہ روضے جو عمر بن عبدالعزیز نے بنوائے تھے اور انکے گرد جو مکان تعمیر کروائے تھے گروا دئیے اسی نے حکم دیا کہ کربلا میں امام حسین علیہ السّلام کی زیارت کو کوئ نا جایا کرے اور ان پر ہل چلوائے اور نہر فرات کا پانی چھوڑنے کی جسارت کی اس نے ایک نو مسلم یہودی جسکا نام " ویرج تھا " اسکو حکم دیا کہ نشان قبر امام حسین ع مٹا دے کیونکہ دوسرے مسلمانوں نے یہ کام کرنے سے انکار کردیا تھا جس نے ھل چلوائے اور پانی چھوڑا اور اس کام کیلیئے اس " ویرج " نے یہودیوں سے مدد لی لیکن پانی قبر امام حسین علیہ السّلام تک پہنچ کر طواف کرنے لگا اسی وجہ سے اس جگہ کو آج بھی " حائر " کہتے ھیں ۔ ۔ مُتوکل کا امام علی النقی ع کو سامرہ میں بلانا : ------------------------------------------- متوکل تخت حکومت پر بیٹھا تو کیسے امام علی النقی علیہ السّلام سے لاپرواہ رہ سکتا تھا ؟ چنانچہ اس نے تین سو افراد کا لشکر " یحییٰ بن ہر ثمہ " کی قیادت میں بھیج کر آپکو سامرہ میں بلوا لیا ۔ امام علی النقی علیہ السّلام کی نطر بندی : -------------------------------------- امام علی النقی علیہ السّلام کو دھوکہ سے بلوا کر پہلے تو " خان الصعالیک " میں نظر بند کیا گیا پھر اسکے بعد ایک اور جگہ نظر بند کردیا گیا اور باقی کی تمام حیات ظاھری آپ علیہ السّلام کی اسی قید نظر بندی میں گزری ۔ امام علی نقی علیہ السّلام کی نطر بندی اور اللہ ج کی طرف سے عذاب و اشارے : --------------------------------------------------------------------------- متوکل لعین کے ظلم جیسے جیسے بڑھتے رھے اللہ جل شانہ کی طرف سے اس قوم پر اسکے غیض و غضب کے اشارے ہوتے رھے موّرک اعظم لکھتا ھے متوکل کے زمانے میں بڑی آفات آئیں بہت سے زلزلے آئے زمینیں دھنس گئیں آگ بہت بار لگی آسمان سے ھولناک آوازیں سنائی دیں تیز ھوا یعنی باد سموم چلی ( تارنیڈو) جس سے بہت سے جانور ھلاک ھوئے فصلیں تباہ ھوئیں اور جانی و مالی نقصان ھوا آسمان سے لاتعداد ستارے ٹوٹے دس دس رطل کے پتھر اسمان سے برسے رمضان 23 ھجری مین ایک پرندہ جو کوّے سے بڑا تھا شام کے شہر حلب میں آکر بیٹھا اور یہ شور مچایا " یاایھا الناس اتقوااللہ اللہ اللہ " چالیس دفع اس نے یہ پکارا اور پھر اڑ گیا ( بحوالہ تاریخ اسلام جلد 1 صفحہ 65 ) ۔ حجرت امام علی النقی اور شیر قالین : ----------------------------------- مُلّا جامی لکھتا ھے ایک دن متوکل کے پاس ھندوستان سے ایک مشہور جادوگر آیا اور اس نے بہت سے کرتب دکھائے متوکل نے اس سے کہا کہ میرے دربار میں ایک شخص جو بہت شریف و معزز ھے آنے والا ھے اگر تو اپنے کرتب کے ذریعے اسے شرمندہ کرے تو میں تجھے ھزار اشرفی انعام میں دوں گا ۔ اس نے کہا جب وہ معزز شخص آجائے تو کھانے کا بندوبست کرنا اور مجھے انکے پہلو میں بٹھانا ایسا شرمندہ کروں گا کہ یاد رکھے گا متوکل لعین خوش ھوگیا جب امام علی نقی ع تشریف لائے تو اس نے کھانے کا اھتمام کیا اور جادوگر کو امام کے قریب بٹھا دیا کھانا شروع ھوا تو امام ع نے لقمہ اٹھایا تو اس نے کچھ ایسا کیا کہ لقمہ غائب ھوگیا امام نے اسکی طرف دیکھا اور پھر لقمہ کیلیئے ھاتھ بڑھایا اس دفعہ بھی اس نے ایسا کیا جب تیسری بار اس نے ایسا کیا تو امام علیہ السّلام نے اس قالین کی طرف دیکھا جو دیوار پر لٹک رھا تھا اور اس پر شیر کی تصویر بنی ھوئی تھی آپ نے اسکو کہا " یا اسد ۔۔۔۔ اس جادوگر کو نگل لے " شیر قالین سے نکلا اور اس جادوگر کو نگل گیا دربار میں کھلبلی مچ گئی متوکل شرمندہ و خوفزدہ ھوکر بولا " مجھ سے غلطی ھوئی آپ شیر سے کہیئے کہ جادوگر کو واپس کردے " امام علی نقی علیہ السّلام نے جواب دیا ۔ " اگر موسیٰ ع کا عصاء جادوگروں کے سانپ اگل دیتا تو یہ بھی جادوگر کو اگل دیتا " ۔ متوکل واصل جہنم ھوا اسکے بعد اسکا بیٹا مستنصر باللہ خلیفہ بنا اسکے بعد معتز باللہ خلیفہ بنا یہی وہ ملعون ھے جس نے امام علیہ السّلام کو زھر دلوا کر شہید کیا انا للہ و انا علیہ راجعون ۔ تحقیق و تحریر : شیعہ علی ابن ابیطالب علیہ السّلام سیّد حسنین حیدر کاظمی
  21. بسم اللہ العلی الاعلی و ھوالعلی العظیم وھو ربّ العرش العظیم ۔سلسلہ تاریخ اجتہاد کی آج تیسری قسط پیش خدمت ھے پہلے دو مجتہدین کی کہانی آپ سن چکے اور یہ بھی جان چکے کہ انکے نصیب میں انکے اجتہاد نے سوائے لعنت کچھ نہیں دیا ۔ آئیے آج آپکو ایک اور مجتہد سے ملواتا ھوں ۔ اسکا نام ھے " نمروُد " ۔ اس کے اجتہاد نے اسے یہ بتایا کہ یہ " ربّ " ھوگیا ھے بالکل ویسے ھی جیسے ۔۔۔۔۔۔ آج آپکو ایک " ولی الامر المسلمین " نامی مولوی نظر آتا ھے ۔ شنعار کا بادشاہ تھا ، جس کا قصہ بائبل میں بھی درج ہے اسکا تعارف کچھ یوں ھے کہ یہ نام : نمرود سلسلہ نسب : نمرود بن کنعان بن سام بن نوح یعنی حضرت نوح کا پوتا تھا اور حضرت سام کی اولاد اس کا پایہ تخت بابل تھا طوفان نوح میں جب دنیا غرق ھوئی اور محض بیاسی (82) مرد و زن باقی بچے تو حضرت نوح نے ارض دنیا کو دوبارہ آباد کیا انکے تین بیٹے کشتی میں انکے ساتھ تھے 1 - ھام 2 - سام 3 - یافث ان میں سے حضرت سام وہ ھیں جو جدّ ابراھیم علیہ السّلام ھیں انہی کا ایک بیٹا تھا جسکا نام " نمرود " تھا طوفان نوح کے بعد دنیا نئی آباد ھوئی تھی آبادی کچھ اتنی زیادہ تھی نہیں چند ھزار افراد پر مبنی اس آبادی پر حضرت نوح اور حضرت سام کے پیروکاروں کی عقیدت تھی اسی کا فائدہ اٹھانے کا اجتہاد نمرود کو " ربّ " بننے کا شوق دلوا بیٹھا لوگ اسکو عزت دیتے تھے ، اپنی حاجات کیلیئے اسکے پاس آتے تھے نذرانے لاتے تھے (جیسے آج چندے ، صدقات ، زکوٰۃ ، فطرانے ، خمس کی قسم کے نذرانے ) لیکن وہ جو مالک الملک ھے یہ اسکا نظام ھے کہ وہ اس دنیا میں ظالم کو حکومت ضرور دیتا ھے تاکہ اسکی حقیقت و اوقات باھر آسکے چناچہ اس نمرود کو طاقت و حکومت دے دی گئی ھر دور میں حکومت کرنے کی خواھش رکھنے والا مُلّاں ھمیشہ سے بکنے والا مُلّاں دلائل کیساتھ لوگوں کو قائل کرنے میں مشغول ھوگیا ھمیشہ سے خوف کے مارے لوگوں نے جو مُلّاؤں کی پیروی کو ھی دین سمجھتے ھیں انکے مدلّل خطابات نے انکے دلائے ھوئے ڈر نے لوگوں کو یقین دلوا دیا کہ " واقعی نمرود ھی ربّ ھے " (نعوذباللہ) جیسے آج مقلّدین کو یقین ھے کہ " ولی الامر المسلمین نامی مولوی ھے امام ھے ؟ اور اسکی ولائیت ھی دراصل حقیقی ولائیت کا تسلسل ھے ؟ " خیر ۔۔۔۔ چونکہ ھدائیت اللہ ج کی طرف سے ھے اور اسکا ذمّہ بھی اسی نے لے رکھا ھے اس لیئے اپنا کوئی نا کوئی ھادی ایسے مجتہد تک ضرور پہنچتا ھے بس تھوڑا وقت ضرور اللہ ج دیتا ھے کہ " مجتہد کے اجتہاد کی حقیقت کھل کر سامنے آجائے " چنانچہ ھادی برحق یعنی حضرت ابراھیم ع کو اس " اجتہادی ربّ نمرود " کی طرف جانے کا حکم خداوندی ملا ابراھیم علیہ السّلام نمرود کے دربار میں پہنچے درباری مُلّاؤں نے اپنے اس اجتہادی ربّ کے فضائل میں زمین و آسمان کے قلابے ملانے شروع کردئیے تاکہ دربار میں موجود دیگر لوگ کہیں " بھٹک " نا جائیں قرآن حکیم نے اس واقعے کو یوں بیان کیا ھے سورۃ البقرہ آئیت نمبر 285 ------------------------------ اَلَمۡ تَرَ اِلَى الَّذِىۡ حَآجَّ اِبۡرٰهٖمَ فِىۡ رَبِّهٖۤ اَنۡ اٰتٰٮهُ اللّٰهُ الۡمُلۡكَ‌ۘ اِذۡ قَالَ اِبۡرٰهٖمُ رَبِّىَ الَّذِىۡ يُحۡىٖ وَيُمِيۡتُۙ قَالَ اَنَا اُحۡىٖ وَاُمِيۡتُ‌ؕ قَالَ اِبۡرٰهٖمُ فَاِنَّ اللّٰهَ يَاۡتِىۡ بِالشَّمۡسِ مِنَ الۡمَشۡرِقِ فَاۡتِ بِهَا مِنَ الۡمَغۡرِبِ فَبُهِتَ الَّذِىۡ كَفَرَ‌ؕ وَاللّٰهُ لَا يَهۡدِى الۡقَوۡمَ الظّٰلِمِيۡنَ‌ۚ‏ ترجمہ بھلا تم نے اس شخص کو نہیں دیکھا جو اس (غرور کے) سبب سے کہ خدا نے اس کو سلطنت بخشی تھی ابراہیم سے پروردگار کے بارے میں جھگڑنے لگا۔ جب ابراہیم نے کہا میرا پروردگار تو وہ ہے جو جلاتا اور مارتا ہے۔ وہ بولا کہ جلا اور مار تو میں بھی سکتا ہوں۔ ابراہیم نے کہا کہ خدا تو سورج کو مشرق سے نکالتا ہے آپ اسے مغرب سے نکال دیجیئے (یہ سن کر) کافر حیران رہ گیا اور خدا بےانصافوں کو ہدایت نہیں دیا کرتا ۔ آئیے ذرا اس آئیت پر توجہ کیجیئے ارشاد خداوندی ھو رھا ھے اَلَمۡ تَرَ اِلَى الَّذِىۡ حَآجَّ اِبۡرٰهٖمَ فِىۡ رَبِّهٖۤ اَنۡ اٰتٰٮهُ اللّٰهُ الۡمُلۡكَ‌ۘ کیا تم نے اسکو نہیں دیکھا جو ابراھیم سے لڑ رھا تھا ربّ کے معاملہ پر " کیونکہ اللہ نے اسکو حکومت دے دی تھی " یعنی اللہ نے اس بدبخت کو حکومت کیا دی اسکا دماغ ھی خراب ھوگیا ؟ ربّ ھونے کا دعویٰ کربیٹھا ؟؟ تو کلیہ بنا کہ " مجتہد کا اجتہاد کھل کر تب ھی سامنے آتا ھے جب اسے حکومت و اختیار مل جائے " اب چاھے وہ ابراھیم ع کے زمانے کا مجتہد ھو یا آج کا ۔۔۔ اور آپ میں سے کون ھے جو نہیں جانتا کہ " اس اجتہادی مجتہد کا انجام کیا ھوا تھا ؟؟ " ایک مچھر ۔۔۔۔ بس ایک مچھر ۔۔۔ بقایا زندگی اپنے اس اجتہادی علم والے سر پر جوتیوں کی داد وصول کرتے بلآخر مر گیا ۔ لیجیئے جناب تیسری قسط ، تیسرا مجتہد ، تیسرا اجتہاد اور تیسری بھی لعنت ھی نصیب ھوئی درباری مولویوں کے قصائد انکے دلائل اس مجتہد کو نا تو جوتیاں کھانے سے بچا سکے نا مرنے سے اب آپ کا فرض ھے کہ ذرا سوچیئے کیا ان مُلّاؤں نے اُس اجتہادی ربّ کی ربوبیت کیلیئے دلائل نہیں دئیے ھونگے ؟ کیا لوگوں کو یقین نہیں دلوایا ھوگا کہ نمرود کو ربّ مان لینا ھی اصل دین ھے ؟ کیا اس وقت کے لوگ بالکل ھی جاھل تھے ؟ حضرت نوح اور حضرت سام علیہم السّلام کی تعلیمات موجود نہیں تھیں ؟ کیا انہی کی تعلیمات کو اپنے رنگ و تفاسیر میں ڈھال کر نمرود کو ربّ ثابت نہین کیا ھوگا ؟ اور کیا ھوگا تو پھر بتائیں " اس مجتہد نمرود کے مقلّدوں (پیروکاروں) کا انجام کیا ھوگا ؟ کیا نمرود اور اسکے درباری مّؒاں روز محشر انکے ذمہ دار بنیں گے ؟ کیا ان مُلّاؤں نے پہلے یقین نہیں دلوایا ھوگا کہ " ھمارے کہنے پر چلو ھم تمہارے اعمال کے ذمّہ دار ھیں ؟؟ " اگر ایسا ھے تو جو آج آپکو یہی سب کچھ کہہ رھا ھے اس سے بچیں ورنہ جو حال قوم نمرود کا ھوگا وھی آپکا ھوگا کیونکہ جو جس کی تاسئی کرتا ھے وہ اسی کیساتھ محشور ھوگا یہ قانون ھے حقیقی ربّ العالمین کا سمجھیئے یا نا سمجھیئے مرضی ھے آپکی ۔۔۔۔ کیونکہ حساب دینا ھے آپ نے اپنا میں نے حجّت تمام کی ۔۔۔ الحمد للہ ۔ تحقیق و تحریر : شیعہ علی ابن ابیطالب علیہ السّلام سیّد حسنین حیدر کاظمی
  22. بسم اللہ العلی الاعلیٰ و ھوالعلی العظیم و ربّ العالمین ۔کل آپ نےپہلے مجتہد اور اجتہاد کے بانی کے بارے میں جانا آئیے آج آگے چلتے ھیں اور دوسرا سنگ میل طے کرتے ھیں ۔ زمین پر حضرت آدم و حوّا ع کے آباد ھونے کے بعد اللہ جل شانہ نے انہیں دو بیٹے عطاء کیئے ۔۔ 1 - ھابیل 2 - قابیل دونوں نے الگ الگ کام شروع کیا ایک نے زراعت اختیار کی دوسرے نے گلہ بانی اپنائی پروردگار کی سُنت کبھی تبدیل نہیں ھوتی لہٰذا اس دور میں بھی قربانی کا سلسلہ وضع ھوا ایک خاص و مخصوص مقام پر دونوں سال بھر کے بعد اپنی اپنی کمائی میں سے قربانی اللہ ج کو پیش کرتے تھے ھوتا یہ تھا کہ جہاں وہ قربانی رکھی جاتی تھی وھاں " آگ " نمودار ھوتی ( چونکہ لفظ نار ھے اس لیئے آگ ترجمہ کیا جاتا ھے جبکہ مجھے اس سے اتفاق نہیں ھے کیونکہ قرآن حکیم میں نار سے مراد صرف آگ نہیں ھے بلکہ اگر آپ حضرت موسیٰ کا واقعہ پڑھیں تو انکو پہاڑ پر " نار نظر آئی " جس پر انہوں نے اپنی اھلیہ سے کہا " میں جاتا ھوں شائد ھدائیت پاؤں یا روشنی لا سکوں " ) بحر حال ۔۔ جس کی قربانی قبول ھوتی وہ نار اسے قبول کر لیتی دوسرے کو چھوڑ دیتی ایک نے دنبہ رکھا دوسرے نے گیہوں ھابیل کی قربانی قبول ھوئی ، قابیل کی نا ھوئی یہیں سے دنیا کا پہلا مجتہد اور شیطان کا پہلا جانشین پیدا ھوا قابیل نے ھابیل کو قتل کردیا کیونکہ اسکے حسد سے بھرے اجتہاد نے اسکو بتایا کہ " نا ھابیل رھے گا نا اسکی قربانی قبول ھوگی ؟ " پھر اس مجتہد ۔۔۔ یعنی قابیل نے وھی طریقہ اپنایا جو کائنات کے پہلے مجتہد شیطان رجیم نے اپنایا تھا ظاھرئیت کو دیکھ کر استنباط اسے لگا کہ نار اس سے ناراض ھوگئی ھے اسی لیئے اسکی قربانی کو قبول نہیں کیا اب بھلا یہ کیسے ھوسکتا تھا کہ کوئی اجتہاد کرے اور مجتہد اوّل مدد نا کرے ؟؟ فوراً اسکی مدد کرنے پہنچا اور مشورہ دیا کہ " اگر نار کی پرستش کی جائے تو وہ ناراض نہیں رھے گی " اجتہاد نے اپنا کام دکھایا ظواھر پر فیصلہ کرنے والا مجتہد قابیل آگ کی پرستش میں مبتلا ھوگیا اور یہی اسکے لعین ھونے کی محکم دلیل بنا کیونکہ اس نے ایک نئے دین کی بنیاد ڈالی اللہ کو راضی کرتے کرتے " نار کی پرستش " میں لگ گیا اللہ کی سنت ھے کہ جو بھی کسی نئی شئے کا بانی ھے جبتک وہ شئے یا عمل رھے گا اسکا ثواب یا عقاب اسی کے کھاتے میں لکھا جائے گا تو اب اس مجتہد صاحب کے اس نئے دین پر قیامت تک جو بھی " نار کی پرستش " کرے گا اسکا اجر قابیل کے کھاتے میں بھی لکھا جائے گا اور کرنے والے کو بھی کیونکہ ۔۔۔ روز قیامت یہ عذر قطعاً قابل قبول نہیں کہ " میں نے تو اس کے کہنے پر کیا " کیونکہ قرآن حکیم میں واضح ارشاد ھے سورۃ الفاطر آئیت نمبر 18 ---------------------------- وَ لَا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِّزۡرَ اُخۡرَىٰ ؕ وَاِنۡ تَدۡعُ مُثۡقَلَةٌ اِلٰى حِمۡلِهَا لَا يُحۡمَلۡ مِنۡهُ شَىۡءٌ وَّلَوۡ كَانَ ذَا قُرۡبٰى ؕ ترجمہ : اور کوئی اٹھانے والا دوسرے کا بوجھ نہ اٹھائے گا۔ اور کوئی بوجھ میں دبا ہوا اپنا بوجھ بٹانے کو کسی کو بلائے تو کوئی اس میں سے کچھ نہ اٹھائے گا اگرچہ قرابت دار ہی ہو۔ ۔ سورۃ النجم آئیت نمبر 38 -------------------------- اَلَّا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِّزۡرَ اُخۡرٰىۙ‏ ترجمہ یہ کہ کوئی شخص دوسرے (کے گناہ) کا بوجھ نہیں اٹھائے گا ۔ سورۃ البقرہ آئیت نمبر 48 --------------------------- وَاتَّقُوۡا يَوۡمًا لَّا تَجۡزِىۡ نَفۡسٌ عَنۡ نَّفۡسٍ شَيۡـًٔـا وَّلَا يُقۡبَلُ مِنۡهَا شَفَاعَةٌ وَّلَا يُؤۡخَذُ مِنۡهَا عَدۡلٌ وَّلَا هُمۡ يُنۡصَرُوۡنَ‏ ترجمہ : اور اس دن سے ڈرو جب کوئی کسی کے کچھ کام نہ آئے اور نہ کسی کی سفارش منظور کی جائے اور نہ کسی سے کسی طرح کا بدلہ قبول کیا جائے اور نہ لوگ (کسی اور طرح) مدد حاصل کر سکیں ۔ سورۃ یٰسین آئیت نمبر 54 ---------------------------- فَالۡيَوۡمَ لَا تُظۡلَمُ نَفۡسٌ شَيۡـــًٔا وَّلَا تُجۡزَوۡنَ اِلَّا مَا كُنۡتُمۡ تَعۡمَلُوۡنَ‏ ترجمہ اس روز کسی شخص پر کچھ ظلم نہیں کیا جائے گا اور تم کو بدلہ ویسا ہی ملے گا جیسے تم کام کرتے تھے ۔ اب ان آیات کے بعد ان " جدید دور کے جدید مراجع کو ڈوب کے مر جانا چاھیئے جو اپنے ظنی قیاسی اجتہاد کو پیش کرکے کہتے ھیں ۔۔۔ " اگر آپ ھماری توضیح کے مطابق عمل کریں گے تو روز قیامت آپ نہیں بلکہ ھم ذمّہ دار ھونگے " اور ھوش کے ناخن لینا چاھیں ان مقلّدوں کو " کہ ایسے تارک قرآن اور آیات قرآن کو جھٹلانے والوں کی تقلید کرتے ھیں ؟ " ذرا سوچیئے روز محشر کیا حال ھوگا ؟؟ کیا اللہ ج پوچھے گا نہیں کہ " قرآن میں تمکو بتا نہیں دیا تھا کہ کوئی کسی کا ذمّہ دار نہیں ؟؟ " پھر بھی تم لوگ جاھلوں کی طرح شیطان کی ذرئیت کے فریب میں آگئے ؟؟ آج کی قسط یہیں تک روکتا ھوں دیکھتے جائیے کہ یہ اجتہاد آپکو کیا کیا دکھاتا ھے ؟ میری کسی ایک بات یا دلیل کو جھٹلا کر دکھائیے ؟؟ کیا قابیل کے اجتہاد نےاس سے قتل نہیں کروایا ؟ کیا قابیل کے اجتہاد نے اسے آتش پرست نہیں بنایا ؟ اگر ھاں تو پھر سوچیئے ۔۔۔ ورنہ ۔۔۔۔ میرا کام ھے آپکے اذھان پر دستک دینا توفیق ھدائیت اللہ ج کی طرف سے ھے میں نے حجّت تمام کی ۔۔۔ الحمدُللہ ۔ تحریر و تحقیق : شیعہؑ علی ابن ابیطالب علیہم السّلام سیّد حسنین حیدر کاظمی
  23. بسم اللہ العلی العظیم ۔ میری آج کی اس تحریر کو ھر قسم کی جذباتی عینک اتار کر پڑھیئے کچھ دیر کیلیئے بھول جائیں کہ آپ کا تعلق کس گروہ سے ھے بس ایک ناقد ، ایک متلاشی حق و حقیقت اور ایک تاریخ کے طالبعلم کی حیثئیت سے پڑھیئے شائد حق واضح ھوجاۓ ؟ شائد آپ کا دل و ضمیر آپکو جھنجھوڑے اور آپ اگر خواب غفلت میں ھیں تو اس گہری نیند سے بیدار ھوجائیں ؟؟ آئیے سفر شروع کرتے ھیں ۔ میں نے دیکھا کہ پروردگار عالم نے اپنے فرشتوں کے سامنے اعلان کیا ۔ " انی جاعل فی الارض خلیفہ " ۔ میں زمین پر خلیفہ بنانے جارھا ھوں ۔ سب فرشتے حیران ھوئے ۔۔۔ خلیفہ ؟؟ اللہ ج کا خلیفہ ؟؟ زمین پر ؟ ابھی یہ سوچ ھی رھے تھے کہ آواز قدرت بلند ھوئی ۔ " فاذا سویتہ و نفخت فیہ من روحی فقعولہ من الساجدین " جب میں اسے سنوار لوں اور اس میں روح میں سے کچھ پھونک دوں تو سب سجدہ کرنا ۔ ایک تلاطم برپا ھوگیا عرش پر فرشتے اور ایک جن ۔۔۔ ابھی خلیفہ پر ھی حیرت زدہ تھے کہ سجدے کا حکم بھی جاری ھوگیا ؟ فرشتوں نے ڈرتے ڈرتے گذارش کی ۔۔ " مالک ۔۔۔ ھم تیری تسبیح و تقدیس کرتے ھیں تو ایسے کو خلیفہ بنا رھا ھے جو قتل و غارت گری کرے گا ؟؟ آواز قدرت آئی " انی اعلم مالا تعلمون " جو میں جانتا ھوں وہ تم نہیں جانتے ۔ اللہ ج نے اعلان تو کردیا لیکن اس خلیفہ کو خلق کرنا شروع نا کیا انتظار میں ڈال دیا تمام فرشے اور ایک جن ۔۔۔ اب انتظار میں ھیں اللہ جانے کیسا ھوگا ؟ کیسا دکھے گا ؟ ایسا کیا ھے اس میں جو اللہ اسے زمین پر اپنا خلیفہ بنا رھا ھے ؟؟ وقت گزرتا رھا فرشتے سوچتے رھے اور انتظار کرتے رھے لیکن وہ جو جن تھا ؟؟ وہ جلتا رھا ۔۔۔ حسد کی آگ اس آگ کے بنے ھوئے کو جلاتی رھی کیونکہ وہ زمین سے ھی گیا تھا وھاں پر اسے بڑا ناز تھا اپنی عبادت و ریاضت پر کہ جسکی بنیاد پر وہ فرش سے عرش تک پہنچا تھا وہ سوچ رھا تھا کہ اسی عبادت و ریاضت کی بنیاد پر اسے زمین پر اللہ کا نمائندہ بننے کا حق حاصل ھوگیا ھے ؟ وقت گزرا ۔۔۔ " قدرت کے ھاتھوں نے تخلیق آدم کا آغاز کیا " فرشتوں نے دیکھا چار قسم کی مٹی اور چار قسم کا پانی لیکر آدم کا خمیر گوندھا گیا اور جب بنا لیس اتو پھر اسی حالت میں چھوڑ دیا گیا ۔۔۔ ایک بار پھر انتظار ۔۔۔ چالیس سال کا انتظار وہ جو زمین سے گیا تھا ، آگ سے بنا تھا ، علم و عبادت پر انحصار کرتا تھا اس نے نفرت سے اس مٹی کے پتلے کو دیکھا کہ جس میں ابھی روح نہیں ڈالی گئی تھی پھر اسکے ظاھر کو دیکھ کر اپنے کو دیکھا نہیں نہیں ۔۔۔ میں اس سے افضل ھوں ، یہ مٹی ھے ، کثیف ھے ، میں آگ ھوں ، لطیف ھوں ، یہ ابھی عبادت کرے گا ، میں کرچکا ھوں اسکے علم نے ، آدم کے ظاھر کو دیکھ کر،۔۔۔۔۔۔۔ " اجتہاد کی بنیاد رکھی " تخلیق آدم مکمل ھوئی روح پھونکی گئی ، سب نے سجدہ کردیا لیکن وہ مجتہد اوّل ؟؟ اس نے انکار کردیا یعنی ۔۔۔ " اجتہاد کی ابتداء ھی حجّت خدا کے انکار سے ھوئی اور بنیاد اللہ کے حکم کے مقابلہ میں اپنے قیاس کو فوقئیت اور دلائل پیش کرنے پر استوار ھوئی " ۔ مولا علی علیہ السّلام کا قول ھے " کسی شئے کا انجام جاننا ھو تو اسکے آغاز کو دیکھو " تو لیجیئے ۔۔۔ " اس اجتہاد نامی بیماری جو کینسر و ایڈز سے بھی زیادہ خطرناک ھے کا آغاز دیکھیئے " ۔ پہلا مجتہد ؟؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شیطان اسکے اجتہاد کے منابع ؟؟ 1 - آدم کا ظاھر 2 - اپنا ظاھر 3 - عبادت کا ظاھر 4 - وقتی کامیابی ۔۔ فرش سے عرش تک کا سفر ۔ پہلا قیاس ۔۔۔۔۔۔۔ یہ مٹی سے ھے ( لعین کو سمجھ ھی نہیں آئی کہ جس مٹی کو حجت خدا کا نور مل جائے وہ مٹی نہیں رھتی خاک شفاء بن جاتی ھے اور سجدہ کرنا پڑتا ھے ) ۔ پہلا اجتہاد ۔۔۔۔۔۔ میں افضل ( کیونکہ اجتہاد کا مطلب ھے کسی نتیجہ پر پہنچنا ) ۔ پہلا فتویٰ ۔۔۔۔۔۔۔ تجھے سجدہ کروں گا اسے نہیں ( حجت خدا کا انکار لیئے یہ فتویٰ دراصل حجّت کا نہیں حکم خدا کا انکار تھا ) ۔ پہلے مجتہد کے پہلے استنباط کے نتیجہ میں پہلے فتوے کا نتیجہ ؟؟ ۔ " نکل جا یہاں سے اور تو مردود ھے ، اور تجھ پر لعنت ھے یوم دین تک " لو جی مبارک ھو پہلا استنباط پہلا مجتہد پہلا فتویٰ پہلی لعنت یعنی اصُول بن گیا ۔۔۔ قیامت تک کیلیئے ۔۔۔ جو بھی یہی فعل کرے گا جو اس پہلے لعین نے کیا وہ ، مردود اور لعنتی ھے اور بات صرف یہیں تک نہیں ، وقت معلوم تک کی چھوٹ بھی ھے ، کرلو جو کر سکتے ھو لیکن بس اس دن تک " جب دین کا دن آجاۓ گا " آپ زیادہ خوش نا ھوں صرف اس مجتہد پر ھی لعنت نہیں ڈالی گیئ بلکہ اسکے پیروکاروں کیلیئے بھی وعید ھے ۔ اور اگر آپ یہ سمجھ رھے ھیں کہ اس پہلی قسط میں یہ سب میں نے اپنے پاس سے ایک فرضی کہانی بیان کی ھے ؟؟ تو نہیں جناب ۔۔۔۔ قیاس کرنے والے پر تو لعنت ھے وہ بھی اللہ کی ۔۔۔ لیجیئے دلیل حاضر ھے وہ بھی روائیتی نہیں ۔۔۔ آئیتی آج پہلے مجتہد کا پڑھیئے اگلی قسط میں اس اجتہادی لعین کا اگلا سفر سناؤں گا انشاء اللہ ۔ دلیل یہ ھے جو کہ قرآن حکیم کی " سورۃ ص " مین من و عن لکھی ھے ۔ اِذۡ قَالَ رَبُّكَ لِلۡمَلٰٓٮِٕكَةِ اِنِّىۡ خَالِـقٌ ۢ بَشَرًا مِّنۡ طِيۡنٍ‏ ﴿۷۱﴾ فَاِذَا سَوَّيۡتُهٗ وَنَفَخۡتُ فِيۡهِ مِنۡ رُّوۡحِىۡ فَقَعُوۡا لَهٗ سٰجِدِيۡنَ‏ ﴿۷۲﴾ فَسَجَدَ الۡمَلٰٓٮِٕكَةُ كُلُّهُمۡ اَجۡمَعُوۡنَۙ‏ ﴿۷۳﴾ اِلَّاۤ اِبۡلِيۡسَؕ اِسۡتَكۡبَرَ وَكَانَ مِنَ الۡكٰفِرِيۡنَ‏ ﴿۷۴﴾ قَالَ يٰۤـاِبۡلِيۡسُ مَا مَنَعَكَ اَنۡ تَسۡجُدَ لِمَا خَلَقۡتُ بِيَدَىَّ‌ ؕ اَسۡتَكۡبَرۡتَ اَمۡ كُنۡتَ مِنَ الۡعَالِيۡنَ‏ ﴿۷۵﴾ قَالَ اَنَا خَيۡرٌ مِّنۡهُ‌ ؕ خَلَقۡتَنِىۡ مِنۡ نَّارٍ وَّخَلَقۡتَهٗ مِنۡ طِيۡنٍ‏ ﴿۷۶﴾ قَالَ فَاخۡرُجۡ مِنۡهَا فَاِنَّكَ رَجِيۡمٌ ۖ‌ ۚ‏ ﴿۷۷﴾ وَّاِنَّ عَلَيۡكَ لَعۡنَتِىۡۤ اِلٰى يَوۡمِ الدِّيۡنِ‏ ﴿۷۸﴾ قَالَ رَبِّ فَاَنۡظِرۡنِىۡۤ اِلٰى يَوۡمِ يُبۡعَثُوۡنَ‏ ﴿۷۹﴾ قَالَ فَاِنَّكَ مِنَ الۡمُنۡظَرِيۡنَۙ‏ ﴿۸۰﴾ اِلٰى يَوۡمِ الۡوَقۡتِ الۡمَعۡلُوۡمِ‏ ﴿۸۱﴾ قَالَ فَبِعِزَّتِكَ لَاُغۡوِيَنَّهُمۡ اَجۡمَعِيۡنَۙ‏ ﴿۸۲﴾ اِلَّا عِبَادَكَ مِنۡهُمُ الۡمُخۡلَصِيۡنَ‏ ﴿۸۳﴾ قَالَ فَالۡحَقُّ  وَالۡحَقَّ اَ قُوۡلُ‌ ۚ‏ ﴿۸۴﴾ لَاَمۡلَئَنَّ جَهَنَّمَ مِنۡكَ وَمِمَّنۡ تَبِعَكَ مِنۡهُمۡ اَجۡمَعِيۡنَ‏ ﴿۸۵﴾ ترجمہ : -------- جب تمہارے پروردگار نے فرشتوں سے کہا کہ میں مٹی سے انسان بنانے والا ہوں ﴿۷۱﴾ جب اس کو درست کرلوں اور اس میں اپنی روح پھونک دوں تو اس کے آگے سجدے میں گر پڑنا ﴿۷۲﴾ تو تمام فرشتوں نے سجدہ کیا ﴿۷۳﴾ مگر شیطان اکڑ بیٹھا اور کافروں میں ہوگیا ﴿۷۴﴾ خدا نے) فرمایا کہ اے ابلیس جس شخص کو میں نے اپنے ہاتھوں سے بنایا اس کے آگے سجدہ کرنے سے تجھے کس چیز نے منع کیا۔ کیا تو غرور میں آگیا یا اونچے درجے والوں میں تھا؟ ﴿۷۵﴾ بولا کہ میں اس سے بہتر ہوں (کہ) تو نے مجھ کو کو آگ سے پیدا کیا اور اِسے مٹی سے بنایا ﴿۷۶﴾ فرمایا یہاں سے نکل جا تو مردود ہے ﴿۷۷﴾ اور تجھ پر قیامت کے دن تک میری لعنت (پڑتی) رہے گی ﴿۷۸﴾ کہنے لگا کہ میرے پروردگار مجھے اس روز تک کہ لوگ اٹھائے جائیں مہلت دے ﴿۷۹﴾ فرمایا کہ تجھ کو مہلت دی جاتی ہے ﴿۸۰﴾ اس روز تک جس کا وقت مقرر ہے ﴿۸۱﴾ کہنے لگا کہ مجھے تیری عزت کی قسم میں ان سب کو بہکاتا رہوں گا ﴿۸۲﴾ سوا ان کے جو تیرے خالص بندے ہیں ﴿۸۳﴾ فرمایا سچ (ہے) اور میں بھی سچ کہتا ہوں ﴿۸۴﴾ کہ میں تجھ سے اور جو ان میں سے تیری پیروی کریں گے سب سے جہنم کو بھر دوں گا ﴿۸۵﴾ ۔ یہ ھے ابتداء ۔۔۔ اب آپ سوچیئے کہ آپکو کیا کرنا ھے ؟؟؟ میں نے حجّت تمام کی ۔۔۔ الحمد للہ ۔ تحقیق و تحریر : شیعہ علی ابن ابیطالب علیہم السّلام : سیّد حسنین حیدر کاظمؔی
  24. کل کا ابلیس لعین : " حضرت آدم ع کو مٹی کا بنا دیکھ کر اجتہاد کر بیٹھا تھا "آج کا ابلیس لعین : " سادات کو نطفہ سے پیدا ھوتا دیکھ کر اجتہاد کر بیٹھا ھے " کل کے ابلیس لعین کا اجتہاد تھا : " اللہ کا خلیفہ کچھ نہیں ھوتا کوئ فضیلت نہیں میرا علم و عمل و عبادت زیادہ ھے " آج کے ابلیس لعین کا اجتہاد ھے : " سیّد ھونا کوئ فضیلت نہیں علم و عمل و عبادت یعنی بظاھر تقویٰ سب کچھ ھے " کل کا ابلیس لعین : " رسول کی بیٹی صلوٰۃ اللہ علیہا سے غیر بنو ھاشم سے نکاح کو حلال سمجھتا تھا " آج کا ابلیس لعین : " مخدومہ کونین سلام اللہ علیہا کی بیٹی سے غیر سادات سے نکاح کو حلال سمجھتا ھے " اللہ جل شانہ نے کل کے ابلیس لعین سے کہا : " آدم میرا خلیفہ ھے اسے سجدہ کر ۔۔۔ اس نے کہا نہیں مانتا " اللہ جل شانہ نے آج کے ابلیس لعین سے کہا : " صدقہ سیّد یعنی آل رسول ص پر حرام ۔۔۔ یہ کہتا ھے میں نہیں مانتا ( یعنی صدقہ کی اقسام ھیں جو کچھ سیّد پر حلال ھیں بمطابق فتاوٰی سیس تانی مجتہد و خام نائ مجتہد ) " اللہ جل شانہ نے کل کے ابلیس سے کہا : " آدم تجھ جیسا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ بولا میں نہیں مانتا " اللہ ج نے آج کے ابلیس لعین سے کہا : " سادات یعنی آل نبی اور انکی اولاد تجھ جیسی نہیں ۔۔ یہ کہتا ھے میں نہیں مانتا " اللہ ج نے کل کے ابلیس لعین سے کہا : " ولی صرف تین ھیں ، میں اللہ ، میرا رسول ص اور والیان امر ۔۔ وہ بولا میں نہیں مانتا " اللہ ج نے آج کے ابلیس لعین سے کہا : " ولی صرف تین ھیں ۔۔ یہ کہتا ھے میں نہیں مانتا آج کا ولی الامر خام نائ ھے " اللہ نے کل کے ابلیس سے کہا : " میرے نبی اور اسکی آل اور انکی اولاد کا حق ھے خمس ۔۔ اس نے کہا میں نہیں مانتا " اللہ نے آج کے ابلیس لعین سے کہا : " خمس صرف سادات کا حق ھے ۔۔۔ یہ کہتا ھے میں نہیں مانتا ( یعنی سہم امام ھم ہر حلال ھے ھم اس سے جو چاھیں کر سکتے ھیں بمطابق فتاویٰ سیس تانی مجتہد و خام نائ مجتہد) " ۔ " کل کا ابلیس ھر حجّت خدا کے پردہ کرنے کے بعد نطفی کو نائب بنا کر اسکی تقلید و اطاعت کرواتا تھا " " آج کا ابلیس لعین وقت کے حجّت خدا ع کے غیبت کبریٰ میں جانے کے بعد نطفی کو انکا نائب بنا کر اسکی تقلید و اطاعت کرواتا ھے " کل کے ابلیس لعین کا ھتیار بھی اجتہاد آج کے ابلیس لعین کا ھتیار بھی اجتہاد کل کا ابلیس بھی مجتہد آج کا ابلیس بھی مجتہد کل والے ابلیس پر بھی لعنت آج کے ابلیس پر بھی لعنت ۔ منجانب : بندہ علی ابن ابیطالب علیہ السّلام سیّد حسنین حیدر کاظمی
  1. Load more activity

Welcome To Shia Forum

At Ajareresalat.net, we have one unifying goal: to seek out the Truth. We welcome individuals from all walks of life and and there exists a diverse mix of cultures and ideologies amongst our members.

Mega Footer

You can configure this content inside your ACP under Customization > Edit > Mega Footer.